قوم کو آج تین معاشی خوشخبریاں ملیں، یہ تین خوشخبریاں کون سی ہیں؟ ملکی معیشت دوبارہ ٹیک آف کرے گی یا نہیں؟ جاوید چودھری نے نیوز بریک کر دی

" >

لاہور(ویب ڈیسک) ابتری‘ بے چینی اور بری خبروں کے طویل بازار کے بعد قوم کو آج تین معاشی خوش خبریاں ملیں گو یہ خوش خبریاں حبس کے موسم میں لو کی طرح ہیں لیکن یہ اس کے باوجود نعمت سے کم نہیں ہیں‘ آج کی پہلی خوش خبری‘ سٹاک ایکس چینج میں گیارہ سو

95 پوائنٹس کا اضافہ ہو گیا‘ سٹاک ایکس چینج چار فروری 2019ء سے گراوٹ کا شکار چلی آ رہی ہے‘ یہ کل تک مجموعی طور پر 8 ہزار360 پوائنٹس نیچے آ چکی تھی لیکن آج اس نے اچانک ٹیک آف کرنا شروع کر دیا‘ یہ رجحان اگر جاری رہا تو دو ہفتوں میں کم از کم سٹاک ایکس چینج ضرور سٹیبل ہو جائے گی اور یہ بہت اچھی خبر ہے‘ دوسری خبر ڈالر ہے‘ ڈالر مئی کی9 تاریخ سے اوپر جانا شروع ہوا تھا‘ یہ 13دن میں 13 روپے 50 پیسہ روپے اوپر چلا گیا‘ یہ کل 155 روپے تک پہنچ گیا تھا‘ یہ آج پہلی بار ایک روپیہ نیچے آیا‘ آج ڈالر کی قیمت 153 روپے ہے اور یہ بھی بہت اچھی خبر ہے اور آج کی تیسری بڑی خوش خبری سعودی عرب پاکستان کو جولائی سے ادھار تیل دینا شروع کر دے گا‘ ہمیں یہ پٹرول تین سال تک ملتا رہے گا‘ ہم ماہانہ اڑھائی سو ملین ڈالر کا پٹرول امپورٹ کرتے ہیں‘یہ رقم سالانہ تین ارب ڈالر ہے‘ یہ رقم ہمارے لئے بہت اہمیت رکھتی ہے‘ ہمیں اگر یہ ریلیف بھی مل گیا تو ہماری اکانومی اپنے پاؤں پر کھڑی ہو جائے گی میں ان تینوں خوش خبریوں پر قوم کو مبارک باد پیش کرتا ہوں۔ اپوزیشن‘ نیب اور چیئرمین نیب پر اتنی چڑھائی کیوں کر رہی ہے اور کیا معیشت ٹیک آف کرے گی یا پھر حالات مزید خراب ہو جائیں گے۔یاد رہے کہ چیئرمین فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) شبر زیدی نے واضح کیا ہے کہ اکاؤنٹس منجمد کرنے کے حوالے سے قانون میں کوئی تبدیلی نہیں کی گئی،

بجلی اور گیس کے تمام صنعتی صارفین کو ایمنسٹی سکیم میں سیلز ٹیکس کی رجسٹریشن کرانا ہوگی، یکم جولائی کے بعد قانون سازی کر کے کارروائی کریں گے، پاکستان میں ایک لاکھ کمپنیاں ایس ای سی پی میں رجسٹرڈ ہیں، ٹیکس فائلر50 ہزارکمپنیاں ہیں۔ ایس ای سی پی چیئرمین کو خط لکھا ہے، باقی 50 ہزار کمپنیوں کو وہ نکالیں یا میں نکالوں گا، نان فائلر کمپنیوں کو ٹیکس نیٹ میں لایا جائے گا، قانون میں کوئی خامی ہے تو بیٹھ کر دیکھیں گے، غیر رجسٹرڈ ادارے 2 فیصد سیلز ٹیکس دیکر رجسٹر ہو سکتے ہیں، ایمنسٹی اسکیم میں سیلز ٹیکس کے واجبات کلیئر کرائے جا سکتے ہیں،غلطی کرنے والے اداروں کو سیلز ٹیکس میں رجسٹرڈ ہونے کا موقع دے رہے ہیں، صنعتی اداروں کا ری ایکشن دیکھ کر سزا کا فیصلہ کریں گے۔ بدھ کو یہاں ایف بی آر حکام کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے شبر زیدی نے بتایا کہ شکایت آرہی تھیں کہ لوگوں کو نوٹس موصول نہیں ہورہے اور اکاؤنٹس منجمد کیے جارہے ہیں، یہ ہدایت کی ہے کہ جس کا اکاؤنٹ منجمد کیا جائے اس کو24 گھنٹے پہلے آگاہ کیا جائے جب کہ اکاؤنٹس منجمد کرنے کے حوالے سے قانون میں کوئی تبدیلی نہیں کی گئی۔چیئرمین ایف بی آر نے کہا کہ پاکستان میں ایک لاکھ کمپنیاں ایس ای سی پی میں رجسٹرڈ ہیں، ٹیکس فائلر50 ہزارکمپنیاں ہیں، ایس ای سی پی چیئرمین کو خط لکھا ہے، باقی 50 ہزار کمپنیوں کو وہ نکالیں یا میں نکالوں گا، نان فائلر کمپنیوں کو ٹیکس نیٹ میں لایا جائے گا۔انہوں نے کہاکہ ایمنسٹی اسکیم میں سیلز ٹیکس کے واجبات کلیئر کروائے جا سکتے ہیں۔

(Visited 9 times, 1 visits today)