کیا صحتِ نکاح‌ کے لیے نکاح نامے پر اندراج ضروری ہے؟

" >

دو عاقل و بالغ مسلمان مردوں یا دو عورتوں اور ایک مرد کی موجودگی میں حق مہر کے عوض لڑکے اور لڑکی کے ایجاب و قبول سے شرعاً نکاح منعقد ہو جاتا ہے۔ اسلام نے نکاح کو خفیہ رکھنے کی بجائے اس کی تشہیر کا حکم دیا ہے تاکہ زیادہ لوگوں

تک اس خبر پہنچے۔ حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا سے مروی ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا: نکاح کا اعلان کیا کرو اور اس پر ڈھول بجایا کرو۔ایک روایت میں حضرت محمد بن حاطب رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: حلال و حرام میں فرق نکاح میں گانا اور دف بجانا ہے۔اسی طرح میاں بیوی کے حالات بگڑنے کا خدشہ ہو تو فریقین کے خاندان میں سے منصف مقرر کرنے کی تعلیم دی گئی ہے تاکہ صلح کروانے میں آسانی پیدا ہو جائے۔ارشادِ باری تعالیٰ ہے: اور اگر تمہیں ان دونوں کے درمیان مخالفت کا اندیشہ ہو تو تم ایک منصف مرد کے خاندان سے اور ایک منصف عورت کے خاندان سے مقرر کر لو، اگر وہ دونوں (منصف) صلح کرانے کا اِرادہ رکھیں تو اللہ ان دونوں کے درمیان موافقت پیدا فرما دے گا، بے شک اللہ خوب جاننے والا خبردار ہے۔النساء، 4: 35نکاح رجسٹر کروانا قانونی تقاضا ہے جو اس کے تحفظ کی علامت ہے۔ ریاستی قانون کے مطابق نکاح و طلاق کی رجسٹریشن کروانا ضروری ہے کیونکہ اس میں خاص طور پر لڑکیوں کے لیے تحفظ ہے۔ ہر وہ ریاستی قاعدہ و قانون جو قرآن وحدیث سے متصادم نہ ہو اور اس میں انسانی بھلائی پائی جاتی ہو تو اس پر عمل کرنا لازم ہے اور یہی اسلامی تعلیمات ہیں۔دو عاقل و بالغ مسلمان مردوں یا دو عورتوں اور ایک مرد کی موجودگی میں حق مہر کے عوض لڑکے اور لڑکی کے ایجاب و قبول سے شرعاً نکاح منعقد ہو جاتا ہے۔ اسلام نے نکاح کو خفیہ رکھنے کی بجائے اس کی تشہیر کا حکم دیا ہے

(Visited 69 times, 1 visits today)