حکومت اور تحریک لبیک کے درمیان ہونے والے معاہدے کا پول کھل گیا، ہالینڈ میں موجود آسیہ کے وکیل سیف الملوک نے میڈیا کے سامنے ناقابل یقین انکشاف کردیا

" >

یوترخت (ویب ڈیسک) ہالینڈ کے شہر یوترخت میں ایک مقامی تنظیم کی جانب سے آسیہ بی بی کا مقدمہ جیتنے والے وکیل سیف الملوک کو خراج تحسین پیش کرنے کے لیے ایک تقریب کا انعقاد کیا گیا جس میں انہیں انسانی حقوق کے ایوارڈ سے نوازا گیا۔ تقریب کے اختتام پر غیر ملکی خبر رساں ادارے سے گفتگو کرتے ہوئے

آسیہ بی بی کے وکیل نے کہا کہ میں نے آسیہ بی بی کا کیس اس لیے لڑا کیونکہ ان کے پاس کچھ بھی نہیں تھا ۔ اس کا خاندان بڑی مشکل میں پھنس چکا تھا ۔ آسیہ مسیح کے پاس پیسے نہیں تھے ۔ ان کو اچھا وکیل کرنے کا حق حاصل ہے ۔ صحافی کے سوال کا جواب د یتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جیسا سلوک اب فتنہ پھیلانے والوں کے ساتھ کیا اس سے قبل ایسا سلوک کبھی بھی نہیں کی گیا ۔ اور پریشر گروپ کے خلاف ریاست کو یہی سلوک کرنا چاہیے۔ آسیہ بی بی کے متعلق سپریم کورٹ کے فیصلے پر انہوں نے کہا کہ جن حالات میں معزز ججز نے فیصلہ کیا کہ 8 تاریخ سے لے کر 31 تک پورے ملک میں جلسے ہوئے جن میں ججز کو دھمکیاں دی گئی کہ اگر آسیہ بی بی کے حق مین فیصلہ آیا تو تمہیں نہیں چھوڑیںگے ۔ ججز نے آئین کا تحفظ کرتے ہوئے حق اور سچ کا ساتھ دیا اور آسیہ بی بی کی سزا کو معطل کر دیا ۔ سیف الملوک نے پی ٹی آئی اور تحریک لبیک کے درمیان ہونے والے معاہدے کے متعلق انکشاف کیا کہ اس کی قانونی اور آئینی کوئی حیثیت نہیں۔ انہوں نے ریاست پاکستان کے حوالے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے اداروں کو پورے زور سے آئین پر عمل درآمد کروانا چاہیے اور لوگوں کو مشورہ دیا کہ قانوں اور آئین کے مطابق زندگی بسر کریں ۔

(Visited 571 times, 1 visits today)

اپنا تبصرہ بھیجیں