جمال خاشقجی کے بعد ایک اور سعودی صحافی قتل، مگر اسے کیوں قتل کیا گیا؟برطانوی اخبار کے انکشاف نے تہلکہ مچا دیا

" >

ریاض (ویب ڈیسک ) سعودی عرب میں ایک اور صحافی کا مبینہ طور پر قتل کردیا گیا ہے۔ برطانوی اخبار نے دعویٰ کیا ہے کہ سعودی صحافی ترکی بن عبدالعزیز الجاسر سعودی جو حکومت کے ناقد تھے، دوران حراست قتل کردیے گئے ہیں۔میڈیا رپورٹ کے مطابق ترکی بن عبدالعزیز اس سال مارچ سے سعودی عرب کی حراست میں تھے


کراچی کی نائٹ پارٹیاں : مگر ان پارٹیوں میں دراصل ہوتا کیا ہے ، کمروں اور چابیوں کی کہانی کیا ہے ؟ اندر کے حالات سے واقف ایک شوقین نے انکشافات کی لائن لگا دی
جہاں تشدد کرنے کے بعد انہیں قتل کیا گیا تھا۔اخبار کا کہنا ہے کہ سعودی حکومت کو صحافی پر حکومت مخالف سوشل میڈیا اکاؤنٹ چلانے کا شبہ تھا۔واضح رہے کہ اس سے قبل سعودی صحافی جمال خا شقجی بھی رواں سال دو اکتوبر کو استنبول میںسعودی قونصل خانہ میں داخل ہونے کے بعدلاپتہ ہوگئے تھے۔صحافی کی گمشدگی کے کچھ دن بعد ترکی کا موقف سامنے آیا تھا کہ انہیں یقین ہے کہ خاشقجی کو مار دیا گیا تاہم سعودی عرب ترکی کے اس موقف کی متعدد بار تردید کرتا رہا۔خاشقجی کی گمشدگی کے بعد مغرب کی طرف سے سعودی عرب پر دباؤ بہت بڑھ گیا تھا کہ وہ اس گمشدگی کے بارے میں قابل اعتبار وضاحت فراہم کرے جبکہ متعدد معربی ممالک نے سعودی عرب میں ہونے والی سرمایہ کاری کانفرنس کے بھی بائیکاٹ کا اعلان کیا ہے۔بعدازاں سعودی عرب نے خاشقجی کے قتل کا اعتراف کرلیا تھا۔‎
خان صاحب : آپ کی حکومت کا اللہ ہی حافظ ہے ۔۔۔۔ ہمیشہ عمران خان کے حق میں لکھنے والے صف اول کے کالم نگار نے یہ بات کیوں کہہ ڈالی ؟ آپ بھی پڑھیے

(Visited 72 times, 1 visits today)

اپنا تبصرہ بھیجیں